All posts by wadikiawaz2016

ایک ماہ گزر جانے کے باوجود چاڈورہ کے ایس ڈی ایم نے چارج نہیں سنبھالا 

مقامی لوگ سراپا احتجاج ، گورنر انتظامیہ سے فوری اصلاح کامطالبہ 
سرینگر؍؍ جے کے این ایس ؍؍ایک ماہ قبل چاڈورہ میں نئے ایس ڈی ایم کی تعیناتی کے باوجود بھی ابھی تک آفیسر نے اپنا چارج نہیں سنبھالا جس کے نتیجے میں لوگوں کو سخت مشکلات کا سامنا کرناپڑرہا ہے۔ مقامی لوگوں نے بتایا کہ سینکڑوں فائلیں ایس ڈی ایم آفس میں دھول چاٹ رہی ہے کیونکہ ان فائلوں پر دستخط نہیں ہو پا رہے ہیں۔ جے کے این ایس کے مطابق ایک ماہ قبل چاڈورہ میں نئے ایس ڈی ایم کو تعینات کرنے کے احکامات صادر کئے تاہم ابھی تک نئے ایس ڈی ایم نے چارج نہیں سنبھالا جس کے نتیجے میں لوگوں کو سخت مشکلات کا سامنا کرناپڑرہا ہے۔ مقامی لوگوں نے بتایا کہ سٹیٹ سبجیکٹ اور دوسرے کاغذات کیلئے انہیں در در کی ٹھوکریں کھانے پر مجبور ہوناپڑرہا ہے کیونکہ ایس ڈی ایم نے ابھی تک چارج نہیں سنبھالا جبکہ دفتر میں تعینات آفیسران کا کہنا ہے کہ ایس ڈی ایم دو ماہ کے بعد اپنا چارج سنبھالیں گے جس کی وجہ سے لوگ ذہنی کوفت کا شکار ہو گئے ہیں۔ مقامی لوگوں نے ریاست کے گورنر این این ووہرا سے اس ضمن میں فوری اصلاح کا مطالبہ کیا ہے۔ 

طاریق حمید قرہ نے نئی دہلی میں راہول گاندھی کے ساتھ ملاقات کی ریاست کی سیاسی صورتحال پر تبادلہ خیال 

طاریق حمید قرہ کو بہت جلد کشمیر امور انچارج کی ذمہ داری سونپی جار ہی ہے کانگریس ہائی کمانڈ نے اصولی طورپر فیصلہ کیا ہے 
سرینگر؍؍ جے کے این ایس ؍؍کانگریس کے سینئر لیڈر طاریق حمید قرہ نے نئی دہلی میں آل انڈیا کانگریس کے نائب صدرراہول گاندھی سے ملاقات کی ۔ معلوم ہوا ہے کہ دونوں لیڈروں کے درمیان ملاقات کے دوران ریاست جموں وکشمیر میں پنچایت الیکشن میں کانگریس امیدواروں کو کامیابی سے ہمکنار کرنے کیلئے پارٹی کارکنوں کو لوگوں کے ساتھ جڑ جانے پر زور دیا گیا ۔ دریں اثنا کانگریس ذرائع کا کہنا ہے کہ طاریق حمید قرہ کو عنقریب ہی کشمیر انچارج کی ذمہ داری سونپی جار ہی ہے۔ جے کے این ایس کے مطابق 51ممبر کانگریس کمیٹی کے ممبر منتخب ہونے کے بعد کانگریس کے سینئر لیڈر نے نئی دہلی میں نائب صدر راہول گاندھی کے ساتھ ملاقات کی ۔ معلوم ہوا ہے کہ دونوں لیڈروں کے درمیان دو گھنٹے تک بند کمرے میں میٹنگ ہوئی جس دوران ریاست جموں وکشمیر کی سیاسی صورتحال پر دونوں لیڈروں کے درمیان تبادلہ خیال ہوا۔ ذرائع نے بتایا کہ میٹنگ کے دوران طاریق حمید قرہ نے راہول گاندھی کو ریاست کی سیاسی صورتحال پر جانکاری فراہم کرتے ہوئے بتایا کہ پی ڈی پی اور بھاجپا کی سابق مخلوط حکومت نے ریاست کے تینوں خطوں کے لوگوں کو مایوس کیا ہے۔ انہوں نے کہاکہ ریاست جموں وکشمیر کے لوگ اب بدلاو چاہتے ہیں اور آنے والے پنچایتی اور میونسپل الیکشن میں کانگریس پارٹی کی جیت یقینی ہے کیونکہ ریاست کے تینوں خطوں کے لوگ اب یہ جان چکے ہیں کانگریس واحد ایسی جماعت ہے جو تمام مذاہب کے ماننے والوں کو بھلا چاہتی ہے۔ اس موقعے پر راہول گاندھی نے بتایا کہ آنے والے الیکشن میں پارٹی کے امیدواروں کو کامیابی سے ہمکنار کرنے کیلئے آج سے پارٹی کارکنوں اور لیڈروں کو لوگوں کے ساتھ قریبی تال میل رکھنے پر زور دیا ۔ انہوں نے کہاکہ کانگریس نے ہمیشہ ریاست کے لوگوں کیلئے کام کیا ہے اور وہ وقت دور نہیں جب ریاست میں ایک دفعہ پھر کانگریس حکومت بنانے میں کامیاب ہوئے جائے گی ۔ دریں اثنا کانگریس ذرائع نے بتایا کہ طاریق حمید قرہ کو بہت جلد کشمیر امور انچارج کی ذمہ داری سونپی جار ہی ہے۔ معلوم ہوا ہے کہ کانگریس صدر سونیا گاندھی اور راہول گاندھی نے اصولوں طور پر فیصلہ کیا ہے کہ طاریق حمید قرہ کو کشمیر امور انجارچ کی ذمہ داری فراہم کی جائے گی کیونکہ طاریق حمید قرہ واحد ایسے لیڈر ہے جس نے بہت کم وقت میں سیاست میں نام کمایا ہے ۔ 

موٹر سائیکل پر سوار عسکریت پسندوں نے سوپور میں سیکورٹی فورسز پر فائرنگ کی 

بٹہ پورہ ماگام ہندواڑہ میں سیکورٹی فورسز اور جنگجوؤں کے درمیان خونریز جھڑپ ایک عسکریت پسند ہلاک 
سرینگر؍؍ جے کے این ایس ؍؍بٹہ پورہ ماگام ہندواڑہ میں سیکورٹی فورسز اور جنگجوؤں کے درمیان جھڑپ میں اب تک ایک عسکریت پسند کو فوج نے مار گرانے کا دعویٰ کیا ۔ ادھر موٹر سائیکل پر سوار عسکریت پسندوں نے نور باغ سوپور میں سیکورٹی فورسز پر اندھا دھند فائرنگ کی تاہم اس حملے میں کسی کے زخمی یا ہلاک ہونے کے بارے میں کوئی اطلاع موصول نہیں ہوئی ۔ سیکورٹی فورسز نے آس پاس علاقوں کو محاصرے میں لے کر بڑے پیمانے پر جنگجو مخالف آپریشن شروع کیا۔ دریں اثنا کپواڑہ کے جنگلات میں ایک ہفتے سے جاری تلاشی آپریشن اختتام پذیر ۔ جے کے این ایس کے مطابق بٹہ پورہ ماگام ہندواڑہ میں جنگجو مخالف آپریشن کے دوران رہائشی مکان میں محصور عسکریت پسندوں اور سیکورٹی فورسز کے درمیان گولیوں کا تبادلہ ہوا۔ معلوم ہوا ہے کہ فوج نے بھی پوزیشن سنبھال کر جوابی کارروائی کی جس دوران کافی دیر تک تصادم جاری رہا۔ دفاعی ذرائع کے مطابق سیکورٹی فورسز کے ابتدائی حملے میں ایک عدم شناخت جنگجو کو مار گرایا گیا ہے تاہم ابھی تک نعش برآمد نہیں کی جاسکی کیونکہ اب بھی علاقے میں دو سے تین عسکریت پسند موجود ہیں جنہیں مار گرانے کیلئے اضافی کمک کو طلب کیا گیا ہے۔ دفاعی ذرائع کے مطابق علاقے میں وقفے وقفے سے جنگجوؤں اور سیکورٹی فورسز کے درمیان گولیوں کا تبادلہ جاری ہے۔ ادھر نور باغ سوپور میں اُس وقت سنسنی اور خوف ودہشت کاماحول پھیل گیا جب موٹر سائیکل پر سوار عسکریت پسندوں نے ناکہ پر بیٹھے سیکورٹی فورسز پر اندھا دھند فائرنگ کی ۔ مقامی ذرائع کے مطابق ناکہ پر بیٹھے اہلکاروں نے موٹر سائیکل کو رکنے کا اشارہ کیا تاہم عسکریت پسندوں نے ناکہ توڑ کر سیکورٹی فورسز پر فائرنگ کی ۔ پولیس وفورسز نے بھی جوابی کارروائی کی تاہم اس دوران ملی ٹینٹ فرار ہونے میں کامیاب ہوئے۔ حملے کے بعد سیکورٹی فورسز نے نور باغ سوپور اور اُس کے ملحقہ علاقوں کو محاصرے میں لے کر حملہ آوروں کی بڑے پیمانے پر تلاش شروع کی ۔ مقامی لوگوں کے مطابق سیکورٹی فورسز نے گھر گھر تلاشی لی جس دوران مکینوں کے شناختی کارڈ باریک بینی سے چیک کئے گئے۔ پولیس کے ایک سینئر آفیسر نے بتایا کہ حملہ آوروں کی شناخت کیلئے کارروائی شروع کی گئی ہے۔ ادھر کپواڑہ کے جنگلات میں پچھلے ایک ہفتے سے جاری تلاشی آپریشن کو ختم کیا گیا ہے۔ دفاعی ذرائع کے مطابق جنگلی علاقے کی بڑے پیمانے پر تلاشی لی گئی تاہم مفرور عسکریت پسندوں کا کئی پر اتہ پتہ نہیں چل سکا جس کے بعد آپریشن کو ختم کیا گیا۔