سرینگر میں 15سال بعدبی ایس ایف اور آئی ٹی بی پی تعینات ،عوامی حلقوں میں خدشات 

اقدام امن و قانون کی صورت حال کو برقرار رکھنے کے لئے اٹھایا گیا:پولیس
سرینگر؍؍کے این ایس ؍ ؍شہر سرینگر میں مرکزی سرکار کی جانب سے 100نئی فورسز کمپنیوں کے تعیناتی کے احکامات کے چند گھنٹے بعد 15سال کے کے بعدسرینگر شہر میں بارڈر سیکورٹی فورسز (بی ایس ایف) اور انڈو تبتین بارڈرپولیس فورس (آئی ٹی بی پی) اہلکاروں کوشہر کے حساس مقامات سی آر پی ایف کی جگہ تعینات کیا جارہا ہے ۔جس دوران لوگوں کے دلوں دونوں فیصلے کو لے خدشات پیدا ہوگئے جبکہ پوری وادی میں افواہ بازی کا بازار بھی گرم ہوا۔ادھر زونل پولیس ہیڈ کورٹر کی طرف سے جاری ایک اور بیان میں بتایا گیا ہے کہ اس طرح کی تعیناتی کا مقصد امن و قانون کی صورتحال بنائے رکھنا ہے۔کشمیر نیوز سروس ( کے این ایس) کے مطابق مرکزی سرکار کی جانب سے کشمیر میں 100 نئی سی آر پی ایف کمپنیوں کی تعیناتی کے اعلان کے چندگھنٹوں بعد جموں کشمیر پولیس نے سنیچر کو ایک حکمنامہ جاری کرتے ہوئے کہا کہ شہر سرینگر کے اہم اور حساس مقامات پر سی آر پی ایف کی جگہ بارڈر سیکورٹی فورسز (بی ایس ایف) اور انڈو تبتین بارڈرپولیس فورس (آئی ٹی بی پی) اہلکاروں کی تعیناتی عمل میں لائی جارہی ہے۔اس دوران کشمیر وادی میں اچانکفورسز کی اضافی نفری کو تعینات کرنے پر عام لوگوں کے دلوں میں طرح طرح کے خدشات پیدا ہو رہے ہیں جبکہ وادی افواہ بازی کا بازار بھی بڑے پیمانے پر گرام ہے جس کے نتیجے میں لوگوں کے دلوں میں طرح طرح کے خڈشات پیدا ہو رہے ہیں ۔تاہم اس دوران زونل پولیس ہیڈ کورٹر سرینگرکی طرف سے جاری ایک اور بیان میں بتایا گیا ہے کہ اس طرح کی تعیناتی کا مقصد امن و قانون کی صورتحال بنائے رکھنا ہے۔خیال رہے وادی کشمیر کے باقی حصوں کے ساتھ ساتھ شہر سرینگر میں 90کی دہائی کے ابتدائی ایام میں جب یہاں ملٹنسی شروع ہوئی تھی تب سے سال2004تک یہاں بی ایس ایف شہر سرینگر کے علاوہ پوری وادی کشمیر میں تعینات تھی جہاں بعد میں سال2004اس وقت کی سرکار نے حالات میں بہتری آنے کے بعد یہاں بی ایس ایف کی جگی سی آر پی ایف کو تعینات کیا تھا جو شہر میں پولیس کے ساتھ ساتھ امن و قانون کے لئے جگہ جگہ تعینات رہتے تھے اس دوران قریب15سال بھی بی ایس ایف سرینگر میں دوبارہ تعینات کیا ہے ۔اس قبل مرکزی وزیر داخلہ نے اپنے ایک حکمنامے میں کہا کہ وہ کشمیر میں مرکزی فورسز کی نئی ایک سو کمپنیاں تعینات کررہے ہیں جن میں بی ایس ایف اور آئی ٹی بی پی اہلکار بھی شامل ہیں۔خیال رہے14فروری کے روز ضلع پلوامہ کے لتہ پورہ اونتی پورہ میں جنگجوؤں کے ایک خود کش حملے میں49سی آر پی ایف اہلکار جاں بحق ہوکے علاوہ متعدد زخمی ہوئے۔قابل ذکر بات یہ ہے اس حملے کے بعد ہندوستان اور پاکستان کے درمیان انتہائی کشیدہ حالات پیدا ہوئے جبکہ پوری وادی کے ساتھ جنوبی کشمیر میں درجنوں افراد کو گرفتار کیا گیا ہے جس کے نتیجے میں یہاں خوف و دہشت کا ماحول قائم ہوا ہے ۔ 

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Social media & sharing icons powered by UltimatelySocial