بے لوث قربانیوں کو کسی بھی طور فراموش نہیں کیا جائیگا

جنوبی کشمیرمیں ہزاروں لوگوں کو یرغمال بناناقابل مذمت/حریت(ع)
سری نگر//حریت کانفرنس(ع )نے جنوبی کشمیر کے متعدد علاقوں میں فوج اور فورسز کی جانب سے CASO کی آڑ میں قتل و غارت، پکڑ دھکڑ، مار دھاڑ، تلاشی کی کارروائیوں اور راست فائرنگ سے ایک نہتے نوجوان فیاض احمد وانی ولد محمد احسن وانی ساکنہ چیوہ کلان پلوامہ کو شہید اور درجنوں افراد شدید زخمی کئے جانے کی شدید مذمت کرتے ہوئے اسے کھلی سرکاری دہشت گردی قرار دیا ہے۔کے این این کوموصولہ بیان میں معصوم فیاض احمد وانی کو اُس کی قربانی پر شاندار الفاظ میں خراج عقیدت ادا کرتے ہوئے کہا گیا کہ کشمیری عوام کی ان بے لوث قربانیوں کو کسی بھی قیمت پر فراموش نہیں کیا جائیگااور حق خودارادیت کی پر امن جدوجہد کو پایہ تکمیل تک لیجانے کیلئے کسی بھی طرح کی قربانی سے دریغ نہیں کیا جائیگا۔بیان میں کہاگیا کہ فوج اور سرکاری فورسز نے جنوبی کشمیر کے تقریباً ۱۸ دیہاتوں کا محاصرہ کرکے عسکریت پسندوں کی تلاشی کی آڑ میں پورے علاقے کو فوجی چھاؤنی میں تبدیل کردیا گیا ہے اور CASO کی آڑ میں پکڑ دھکڑ اور تلاشی کارروائیوں کے نام پر ہزاروں کی آبادی کو یرغمال بنایا گیا ہے ۔حریت کانفرنس(ع )بیان میں کہا گیا کہ یاترا کے اختتام کے فوری بعد جس طرح پورے جنوبی کشمیر میں فوج اور فورسز نے متعدد علاقوں روہامہ، بیلو، راج پورہ، ماتری گام،پتری گام، فرسی پورہ، گاسو، کچوپورہ، چک میرگنڈسمیت درجنوں دیہات میں عسکریت پسندوں کی تلاشی کے نام پر پورے علاقے میں خوف و دہشت کا ماحول برپا کیا گیا ہے اور تمام مسلمہ جمہوری اور اخلاقی اصولوں کو بالائے طاق رکھ کر نہتے لوگوں کے قتل اور طاقت اور تشدد کے بل پر عوام کو ہراساں کرنے کا مذموم عمل شروع کیا گیا ہے وہ نہتے عوام کے تئیں کھلی جارحیت کے مترادف ہے۔بیان میں کہا گیا کہ کشمیر میں تعینات فوج اور فورسز کالے قوانین کے بل پر خود کو حاصل بے پناہ اختیارات کا بڑی بے دردی کے ساتھ استعمال کررہی ہے اور عام لوگوں کو تختہ مشق بنانے سے گریز نہیں کررہی ہے۔حریت کانفرنس(ع )بیان میں کہاگیا کہ ایک طرف سرکاری سطح پر کشمیر کی نوجوان نسل کو مثبت سرگرمیوں پر مائل کرنے کے بلند بانگ دعوے کئے جارہے ہیں اور دوسری طرف نوجوانوں کے قتل و غارت اور انہیں طاقت اور قوت کے بل پر پشت بہ دیوار کرنے کیلئے اوچھے اور مذموم ہتھکنڈے بروئے کار لائے جارہے ہیں جس سے حکمرانوں کی یہاں کے عوام کے تئیں جارحانہ اور انتقام گیرانہ عزائم کی عکاسی ہوتی ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *