مزاحمتی کارکن کی ہلاکت پر مشترکہ مزاحمتی قیادت برہم 

المناک واقعات کو ٹھنڈے پیٹوں برداشت نہیں کیا جائیگا
سرینگر:۸،ستمبر:کے این این / مشترکہ مزاحمتی قیادت سید علی گیلانی، میرواعظ ڈاکٹر محمد عمر فاروق اور محمد یٰسین ملک نے بومئی سوپور میں حال ہی میں ڈیڑھ برس سے زائد عرصہ جیل میں گزارنے کے بعد رہائی پانے والے ایک نوجوان حریت پسند راہنما حاکم الرحمان کو اپنے گھر کے نزدیک ہی گولی مار کر انتہائی بے دردی کی حالت میں جاں بحق کئے جانے کی بزدلانہ کارروائی کی شدید ترین الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے کہا کہ مزاحمتی قیادت حریت پسند سیاسی راہنماؤں کو قتل کئے جانے کے المناک واقعات کو ٹھنڈے پیٹوں برداشت کرنے کی متحمل نہیں ہوسکتی۔کے این این کو موصولہ بیان کے مطابق مزاحمتی قیادت نے اس المناک سانحہ کی تفصیلات جاننے کے لیے ایک چھ رُکنی کمیٹی کو جائے واردات کی طرف روانہ کردیا ہے، تاکہ اس المناک واقع کے مضمرات کے پیش نظر آئندہ کی حکمت عملی وضع کی جاسکے۔ مزاحمتی قیادت نے حریت پسند عوام سے دردمندانہ اپیل کرتے ہوئے کہا کہ وہ صبروتحمل اور نظم وضبط کے دامن کو مضبوطی سے تھام لیں، تاکہ ان اندوہناک سانحات کے پیچھے تحریک دشمنوں کے مذموم ارادوں اور ناپاک سازشوں کو طشت از بام کرنے کے بعد ناکام ونامراد بنایا جاسکے۔ مزاحمتی قیادت نے جاں بحق حاکم الرحمان کے اہل خانہ، ان کی بیوہ اور پانچ کم سن بچیوں کے ساتھ اپنی دلی تعزیت اور ان کے ساتھ ہمدردی کا اظہار کرتے ہوئے اللہ تعالیٰ سے دُعا کی کہ وہ شہید حاکم الرحمان کے درجات کو بلند کرکے اور ان کے اہل وعیال کو یہ صدمۂ عظیم برداشت کرنے کی توفیق عطا فرمائے۔ 

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *