کانگریس کا مرکزی حکومت کے خلاف سرینگر ،جموں میں احتجاج 

ضلع ترقیاتی کمشنروں کو میمورنڈم پیش ،کہاملک کے پہریدار کی بدعنوانی پوری دنیا کو پتہ 
سری نگر:۵،ستمبر:کے این این/ کانگریس نے بدھ کو ریاست جموں وکشمیر میں مرکزی حکومت کے خلاف احتجاجی مظاہرے کئے اور ریلیاں بھی نکالی ،جس دوران ضلع ترقیاتی کمشنروں کو میمورنڈم پیش کئے گئے ۔کے این این کے مطابق کانگریس پارٹی نے مرکزی حکومت کے خلاف بدھ کو سرینگر اور جموں کے کئی اضلاع میں احتجاجی مظاہرے کئے ۔اس سلسلے میں ملی تفصیلات کے مطابق کانگریس لیڈران ،عہدیداراں اور کارکنا ن نے کپوارہ اور بڈگام اضلاع میں مودی حکومت ،کورپشن ،اقتصادی نقصانات اور ملک کے خرمن کو درہم برہم کرنے پر احتجاجی ریلیاں نکالیں ۔کپوارہ میں احتجاجی ریلی کی قیادت پارٹی کے نائب صدر غلام نبی مونگا نے کی جبکہ ضلع صدر حاجی فاروق نے بھی خطاب کیا ۔اسی طرح بڈگام میں بھی ایک احتجاجی ریلی نکالی گئی جسکی قیادت پارٹی ترجمان فاروق اندرابی نے کی ۔اس احتجاج میں ضلع صدر زاہد حسین کے علاوہ دیگر لیڈران نے بھی خطاب کیا ۔بعد ازاں دونوں اضلاع میں صدر ہند کے نام ضلع ترقیاتی کمشنروں کے ذریعے میمورنڈم پیش کئے گئے ۔جموں میں بھی ایک احتجاجی ریلی نکالی گئی ۔اس احتجاج کی قیادت پارٹی کے ریاستی صدر غلام احمد میر اور جموں وکشمیر کے انچارج سیکریٹری شکیل احمد نے مشترکہ طور کیا ۔ان احتجاجی مظاہروں کے کانگریس لیڈران نے کہا ’’ملک کا سب سے بڑا دفاعی سودا اور اس میں کرپشن بی جے پی کے دور اقتدار میں ہوا ہے۔مودی حکومت نے تین بار جنگی طیارے کی قیمتوں میں اضافہ کیا ہے۔‘‘ رافیل طیارے سودے کو لے کر بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) حکومت پر حملہ آور ہوئی کانگریس لیڈران نے طنزیہ انداز میں کہا کہ ملک کا چوکیدار ہونے کا دعویٰ کرنے والے وزیر اعظم نریندر مودی کا نام بدعنوانی کے معاملے میں ملوث ہونے سے عوام حیران ہے۔انہوں کہا ’’ملک کا سب سے بڑا دفاعی سودا اور اس میں کرپشن بی جے پی کے دور اقتدار میں ہوا ہے، مودی حکومت نے تین بار جنگی طیارے کی قیمتوں میں اضافہ کیا ہے۔‘‘انہوں نے کہا ترقی پسند اتحاد (یو پی اے) حکومت کے دور میں فرانس کی ڈسالٹ کمپنی سے رافیل طیارے کی قیمت 526کروڑ روپے طے ہوئی تھی لیکن اقتدار میں آتے ہی وزیر اعظم نے 2015 میں فرانس کا دورہ کیا اور اسی طیارے کو1670 کروڑ روپے میں خریدنے کا سودا کیا، 12 دسمبر،2012 کو بین الاقوامی بولی میں 126 رافیل جنگی طیارے خریدے جانے تھے اور ہر جنگی طیارے کی قیمت 526 کروڑ 10 لاکھ روپے تھی۔کل 18 جنگی طیارے فرانس سے بن کر آنے تھے جبکہ 108 جنگی طیارے ہندوستان کی 70سال کی تجربہ کار کمپنی ہندوستان اییرونوٹیکس لمیٹڈ کی طرف سے ’’ٹرانسفر آف ٹیکنالوجی‘‘ کے تحت ہندوستان میں بنائے جانے تھے۔کانگریس لیڈران نے کہا کہ10 اپریل 2015 کو وزیر اعظم نریندر مودی نے پیرس، فرانس میں1670کروڑ 70 لاکھ فی جنگی طیارہ کی شرح سے 36 رافیل جنگی طیاروں کے لئے 60،145 کروڑ روپے میں ’آف دی شیلپف‘ ایمرجنسی خریداری کا اعلان 12 دن پرانی کمپنی کے حق میں کر ڈالا۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *